• تاریخ: 2011 اگست 07

فرانس میں ماہ رمضان


           


فرانس مغربی یورپ میں سب سے بڑا ملک ہے۔ اس ملک کی راجدھانی پیرس ہے اور یہ ملک جرمنی، اٹلی، سپین وغیرہ کا ہمسایہ ہے۔

اس ملک کا رقبہ ۵۵۰۰۰۰ کیلومیٹر مربع ہے اور تقریبا ۶۴ میلین آبادی اس ملک میں پائی جاتی ہے۔

۶ میلین سے زیادہ فرانس میں مسلمان ہیں اور ۹۴ فی صد فرانس کے مسلمانوں میں نوجوان ہیں جو ماہ مبارک میں روزہ رکھتے ہیں ماہ مبارک رمضان کی نسبت فرانس کے مسلمانوں کا لگاو کیسا ہے؟ اس کو ذیل میں ملاحظہ فرمائیں:

ماہ مبارک کا استقبال

۶ میلین سے زیادہ فرانس کے مسلمانوں دنیا کے دیگر مسلمانوں کی طرح ماہ مبارک  کی آمد پر میٹھایاں تقسیم کرتے ہیں مساجد کو چراغاں کرتے ہیں اور انہیں آباد کرتے ہیں۔ فرانس کے مسلمان مخصوصا نوجوان شدت کے ساتھ ماہ مبارک کا انتظار کرتے ہیں اس لیے کہ میڈیا کی رپورٹ کے مطابق ۹۴ فی صد فرانس کے روزہ دار ۳۰ سال سے نیچے کے جوان ہیں۔

رویت ہلال

فرانس میں ماہ مبارک کا چانددیکھنے کی اطلاع تین طریقوں سے ملتی ہے:

۱: ترکی حکومت کی طرف سے چاند دکھنے کا اعلان۔

۲: سعودی عرب اور مصر کی طرف سے چاند دکھنے کا اعلان۔

۳: پیرس فرانسوی اسلامی کمیٹی کی طرف سے اعلان۔

غذائیت

ماہ مبارک کے شروع ہوتے ہیں مسلمان نشین بازاروں میں ایک نئی لہر پیدا ہو جاتی ہے۔ مخصوص طرح کا خرما اور شیرینیاں بکنے لگتی ہیں دکانوں سے تلاوت قرآن اور اسلامی ترانوں کی آوازیں گھونجنے لگتی ہیں۔ اور بازار ایک نیا رنگ و روپ اختیار کر لیتا ہے۔

فرانس  کے مسلمان اس مہینے میں کباب اور خرما چنے سے بنا ایک مخصوص قسم کا حلوا کھانے میں خاص لذت کا احساس کرتے ہیں۔ پودینا کی چائے، شوربا اور " کاسکی" [گندم اور گوشت سے بنی ایک خاص قسم کی مغربی غذا] ان کی ماہ مبارک سے مخصوص غذائیں ہیں۔

مساجد

ایک ہزار چھ سو پچاسی سے زیادہ مساجد اور نماز خانے فرانس کے اندر مسلمان نشین علاقوں میں پائے جاتے ہیں اور تقریبا دو تہائی مراکز میں روزانہ ۱۵۰ افراد سے زائد مسلمان جمع ہوتے ہیں اور ان مراکز میں سے ۲۰ مساجد ہزار افراد تک کو اپنےاندر جگہ دے سکتی ہیں۔

مسجد میں افطار

پیرس اور فرانس کے دیگر علاقوں کی مساجد ماہ مبارک میں ایک نیا رنگ و روپ اختیار کر لیتی ہیں۔اس مہینہ میں محلہ کے اکثر لوگ محلہ کی مسجد میں نماز ادا کرتے ہیں اور افطار کے وقت مساجد میں پانی، چائے، شیرینی،خرما اور دیگر چیزوں سے غریبوں اور فقیروں کو افطاری کرواتے ہیں۔ بعض روزہ دار افطاری کے بعد حقہ کے ٹھیلوں میں حقہ پینے والوں کے ساتھ شامل ہو جاتے ہیں۔ البتہ مساجد میں افطار صرف مسلمانوں سے مخصوص نہیں ہے ہر کوئی افطار کے پروگرام میں شامل ہو سکتا ہے۔

قرآن کریم

فرانس میں ماہ مبارک رمضان کے اہم پروگراموں میں سے ایک مساجد میں ختم قرآن کرنا اور مستحبی نمازیں ادا کرنا ہے۔

مذہبی نشستیں

مذہبی نشستوں کی تشکیل، تفسیر قرآن، شرح احادیث، اخلاق اور تاریخ اسلام کے جلسات مختلف مراکز میں اس مہینہ سے مخصوص ہیں۔

ملٹی میڈیا

فرانس کے مسلمانوں کے ریڈیو پروگرام جیسے مشرقی ریڈیو، بور ریڈیو اس مہینہ میں مخصوص پروگرام اپنے سامعین کے  لیے پیش کرتے ہیں۔ تلاوت قرآن، اس مہینہ کی خبریں ، نصیحتیں اور مواعظ، اپنے فرانسیسی مسلمانوں کے لیے اس ریڈیو سے نشر کئے جاتے ہیں۔

امور خیر

فرانس کے مسلمانوں نے نماز و روزہ کے علاوہ اپنی معاشی اور اقتصادی حالت کو بہتر بنانے کی غرض سے کچھ اسلامی فنڈز قائم کر رکھے ہیں جن کے ذریعے وہ محتاج اور مستحق مسلمانوں کی مالی ضروریات کو پورا کرتے ہیں حتی بعض اوقات غیر مسلمانوں کی بھی مدد کرتے ہیں ان کا یہ عمل غیر مسلمانوں کے درمیان قابل تحسین ہے۔ اس مہینہ میں انفاق کرنے اور مساجد میں افطاری دینے کا بجٹ مشترکہ طور پر جمع کیا جاتا ہے ایسے کام انجام دینے کے لیے کچھ انجمنیں اور کمیٹیاں موجود ہیں جو لوگوں سے چندہ کرکے بجٹ مہیا کرتی ہیں۔

اسلامی ہنر کی نمائش اور تبلیغ

فرانس کے مسلمان بھی دوسرے مسلمانوں کی طرح اس مہینہ کو اسلام کی نشر و اشاعت کے لیے بہترین فرصت سمجھتے ہیں۔ اس حوالہ سے پیرس کی جامع مسجد میں اسلامی کتابوں اور دیگر اسلامی آثار کی نمایش لگائی جاتی ہے۔ کتابوں، جانماز،سجدگاہ و تسبیح وغیرہ اور اسلامی سیڈیوں کا بازار کافی کینسیشن کے ساتھ اس مسجد کے اطراف  میں لگایا جاتا ہے۔ جس سے کافی تعداد میں غیر مسلمان اسلام کو پہچاننے کی طرف مجذوب ہوتے ہیں۔

منبع : ابنا ڈاٹ آئی آر

Copyright © 2009 The AhlulBayt World Assembly . All right reserved